بحرانوں کا مقابلہ کرنا ہے ،ہم نے نفرت کی فضاء کو محبت میں بدلنا ہے

08 تشرين2/نوفمبر 2012

faisalabad.mwm.rajaفیصل آباد میں سیاسی شخصیات اور عمائدین سے ملاقات کے دوران سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کی گفتگو
علامہ راجہ ناصر عباس جعفری :ہمیں اپنے آئمہ ع کی تعلیمات کا مطالعہ کرنا چاہیے ،کم ازکم نہج البلاغہ کا مطالعہ کرنا چاہیے
امام فرماتے ہیں اعرف الزمان من لم یتعجب من حوادث لایام
مولا علی ع فرماتے ہیں من عرفۃ الزمان امنۃ
اپنے زمانے اور حالات کی شناخت :ہم ایشیا میں رہتے ہیں ایشیا ہر لہذا سے امیر ہے ریسورسز سب سے زیادہ یہاں ہیں کنزومر سوسائٹی دنیا میں سب سے زیادہ ہے دنیا کی آبادی سب سے زیادہ،قدرتی زخائرسب سے زیادہ،سستی لبیرسب سے زیادہ ،پروفیشنلزسکیل یہاں سب سے زیادہ ہیں جیسے چائنہ جاپان ایران ،روس کا ایک بڑا حصہ اس حوالے سے قابل ذکر ہیں


پس ایشیا مستقبل میں ترقی کے مواقع رکھتا ،یورپ امریکہ اس لئے ایشیاکو ڈسٹرپ رکھتے ہیں تاکہ وہ ترقی نہ کرے، اب مسئلہ یہ ہے کہ ایشیا میں دنیا ئے اسلام بھی ہے ضرورت اس بات کی ہے کہ ایشین ممالک کو اپنے معاملات کو درست کریں
پاور کے چار ستون ہیں
فوجی طاقت ،اقتصادی طاقت،سیاسی طاقت یعنی اثر رسوخ اور عوام کا اپنے سسٹم پر اعتماد
امریکہ دنیا میں نفرت انگیز ممالک میں تبدیل ہوچکا ہے اقتصادی مسائل اپنی جگہ ہیں، ایشیا میں ان کے لئے سب سے برا چلینج ایران ہے ،سپرو پاور سے ورلڈ پاور میں امریکہ کو گرانے کا کردار ایران نے ادا کیا
اسرائیل نیل سے فرات تک سرحدبنانے والااب اپنے اندر دیواریں بنارہا ہے ان کے لئے سب سے بڑا چلینج اسلامک آئیڈیالوجی میں شیعہ طرز فکر ہے۔
اس چلینج سے نکلنے کے لئے سامراج اہل تشیع کے لئے مشکلات کھڑی کر رہے ہیں کیونکہ شیعہ ایک بڑی آئیڈیالوجی رکھتے ہیں تاریخ میں ہمیشہ اہل تشیع کاایک مثبت کردار رہا ہے، ہم نے خون سے قدروں کو زندہ رکھا ہے، ہم ظالموں کے مقابلے میں ہمیشہ مظلوم کے ساتھ رہے ،اس لئے ہمیں اندرونی اور بیرونی بحرانوں کا شکار کر نے کی کوشش کر رہے ہیں،ایران کے بعد سب سے زیادہ آبادی اہل تشیع کی پاکستان میں ہے ،دنیا کو معلوم ہے کہ شیعہ ایک طاقت ہے ہمارے مکتب میں امامت کا نظریہ ہمیں طاقت دیتا ہے
اس لئے ان کی پالیسی یہ ہے کہ اہل تشیع کو اس قدر مصروف کرو کہ ان کی طاقت ختم ہو جائے اور وہ اپنا اصل کردار نہ کرسکیں ان کو دیگر مکاتب فکر کے ساتھ لڑاواور ہمیشہ جھگڑوں میں الجھا کر رکھو
اب ہم نے بحرانوں کا مقابلہ کرنا ہے ،ہم نے نفرت کی فضاء کو محبت میں بدلنا ہے، سیاسی طاقت کو حاصل کرنا ہے معا،شی طاقت حاصل کرنا ہے ۔
آل محمد کی ولایت کا وزن کمزور لوگ نہیں اٹھاسکتے ہمیں طاقتور بنناہوگا
ہمیں تعلیمی فکری ہر حوالے سے طاقتور بننا ہے، بلوچستان میں ستائیس ایسے گاؤں ہیں جہاں کوئی سکول ہی نہیں ،ہمیں تمام مظلوموں کی آواز بننا ہے خواہ وہ کسی بھی مکتب فکر سے تعلق رکھتا ہو
سیاسی جماعتیں شیعہ ووٹ لینے کے باوجود شیعہ امیدواروں کو اہمیت نہیں دیتی ان کی نہیں سنتی وہ اپنی نماز تک کھل کے نہیں پڑھ سکتے
عزاداری کو ایسی بنائی جائے کہ غیر مسلم بھی اس میں شرکت کرسکیں عزاداری کو اس انداز سے منایا جائے کہ ہر کوئی اس میں شرکت کر سکے ہر کوئی در نواسہ رسول ص میں آسکے آل محمد کی تعلیمات سب تک پہنچ جائے
عزاداری کو اس طرح منایاجائے کہ ہر کوئی اسے میں شریک ہوسکے ،ہم الیکشن میں معتدل مذہبی جماعتوں کو بھرپور سپورٹ کرینگے ۔

ترك تعليقك

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree